کیا چائنیز کمپنی ویوو (Vivo) بھی 6G ٹیکنالاجی کے اوپر کام کررہی ہے؟

Mobile Phones
Vivo 6g technology

ایسا لگتا ہے کہ چینی سمارٹ فون برانڈ ویوو (Vivo) نے 5G کو عالمی سطح پر عام ہوجانے سے پہلے ہی 6G والے سمارٹ فونز پر کام اسٹارٹ کردیا ہے۔ اگر آپ سوچ رہے ہیں کہ آپ کب تک 6G کی کنیکٹیوٹی دیکھیں گے تو ہواوی کے مطابق 6G تو 2030 تک نہیں آئے گی۔

کمپنی نے اپنی پراڈکٹ پر 6G کا لوگو شایع کیا ہے اور یہ لوگوں حیرت انگیز نظر آتا ہے کیوں کہ پوری دنیا کےلئے 5G ٹیکنالاجی کی دستیابی میں اب بھی کچھ سال لگیں گے اور ایسے ٹائیم میں 6G کے بارے میں سوچنا حیرت کی بات ہے۔ اس کے علاوہ جب کہ ویوو B5G/6G سمینار میں حصہ لینے والے کسی بھی دوسری کمپنی کے مقابلے میں 6G ٹیکنالاجی کی تحقیق اور ترقی میں سب سے آگے ہے۔

ماھرین کا کہنا ہے کہ 6G مواصلات میں ابھرتے ہوئے نئے چیلنجوں کو حل کرے گا جس میں ڈیٹا ٹرانسفر، مصنوئی ذھانت، انٹرنیٹ آف تھنگس وغیرہ جیسے چیزوں کو تبدیل کرے گا۔ لہذا توقع کی جارہی ہے کہ 6G نیٹورک میں ڈائون لوڈ کرنے کی اسپیڈ 1TB تک ہوگی جب کہ 5G کی اسپیڈ 1GB تک بتائی جارہی ہے۔

ویسے بھی چین اگلی نسل کے سیلولر موبائیل کمیونیکیشن کو ترقی دینے کی دوڑ میں آمریکا اور دوسرے ممالک پر برتری قائم کرنے کی کوشش کررہا ہے۔ اس وقت چائنا کا شنگھائی شھر 5G کوریج اور براڈ بینڈ گیگا بٹ نیٹورک دونوں کا استعمال کرتے ہوئے دنیا کا پہلا ضلع بن گیا ہے۔