دنیا بھر میں تصدیق شدہ کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد ایک لاکھ ہوگئی

Health and Medicine
Coronavirus outbreak: Global coronavirus cases surpass 100,000

عالمی ادارہ صحت کے تازہ ترین اعداد وشمار کے مطابق کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد ایک لاکھ ہو گئی ہے۔ جب کہ 3300 متاثرین کی اموات واقع ہوئی ہے۔

کورونا وائرس COVID-19 نے پوری دنیا کے 95 ممالک کو متاثر کیا ہے، اس وقت سب سے زیادہ متاثرین کی تعداد چین سے ہے، عالمی ادارہ صحت کے رپورٹس کے مطابق چین میں کل 80559 متاثرین ہیں جس میں 3042 کی اموات واقع ہوئی ہے اور جب کہ 53929 متاثرین صحتیاب ہوگئے ہیں۔

جب کہ دوسرے نمبر پر جنوبی کوریا ہے، اس وقت جنوبی کوریا میں کل متاثرین کی تعداد 6593 ہے جس میں 42 اموات واقع ہوئی ہیں اور 135 متاثرین صحتیاب ہوگئے ہیں۔

تیسرے نمبر پر ایران ہے، ایران میں ٹوٹل متاثرین کی تعداد 4747 ہے جس میں 124 کی اموات واقع ہوئی ہے اور 913 صحتیاب ہوگئے ہیں۔

اور چوتھے نمبر پر اٹلی ہے، اٹلی میں متاثرین کی تعداد 3858 ہے جب کہ 148 اموات واقع ہوئی ہیں اور صرف 414 ہی صحتیاب ہوپائے ہیں۔

اس کے علاوہ جرمنی  میں متاثرین کی تعداد 577 ہے ، فرانس میں 423 متاثرین ہیں، اسپین میں 382 متاثرین ہیں، جپان میں 381 متاثرین ہیں، آمریکا میں 233 متاثرین ہیں، سوئیزرلینڈ میں 131 متاثرین ہیں، سنگاپور میں 130 متاثرین ہیں، نیدھرلینڈ میں 128 متاثرین ہیں، برطانیا میں 116 متاثرین ہیں ، بیلجیم میں 109 متاثرین ہیں، ناروی میں 106 متاثرین ہیں، ہانگ کانگ میں 105 متاثرین ہیں، بھارت میں 31 ہیں  اور پاکستان میں بھی 6 کورونا وائرس کے متاثرین میں شامل ہیں۔

ایران کے بارے میں بتایا جارہا ہے کہ چین کے بعد کورونا وائرس کے سب سے بڑے پھیلاؤ میں دوسرے نمبر پر ہے جس میں اس وقت ہلاکتوں کی تعداد 124 ہوگئی ہے۔

آمریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کورونا وائرس پھیلنے سے نمٹنے میں مدد کےلئے جمعے کے روز 8.3 بلین ڈالر کی امداد پر دستخط کردے ہیں۔

اب تک آمریکا میں وائرس سے 14 اموات ہوچکی ہیں جب کہ متاثرین کی تعداد 233 بتائی جارہی ہے۔

واشنگٹن اسٹیٹ میں جمعرات کے روز درجنوں نئے کیس رپورٹ ہوئے ہیں جس میں نیویارک میں 22 ، سان فرانسسکو میں 2 اور ہیوسٹن میں 2 کیسز رپورٹ کئے گئے ہیں۔

دوسری طرف آئی ایم ایف (بین القوامی مالیاتی فنڈ) نے بھی کورونا وائرس کے متاثرہ ممالک کےلئے 50 بلین ڈالر امداد کا اعلان کردیا ہے۔

آئی ایم ایف نے کہا ہے کہ یہ رقم غریب اور درمیانی آمدنی والے ممالک کی مدد کرنے کےلئے فراہم کی جارہی ہے جن کا صحت کا نظام کمزور ہے اور اس وبا کا سامنا کرنا چاہتے ہیں۔