اگر زمین گردش کرنا بند کردے توکیا ہوگا؟

Earth
Earth stopped spinning

ناسا کا کہنا ہے کہ اگلے چند ارب سالوں تک زمین کے اپنے اسپن کو روکنے کا امکان “عملی طور پر صفر” ہے۔ کیوں کہ زمین کی کشش ثقل اس کی گردش کے حرکت کے مقابلے میں بہت مضبوط ہے۔ تاہم خیالی طور پر اگر زمین اچانک چلنا بند کردیتی ہے تو  ایک خوفناک اثر ہوگا، ہر چیز زمین سے ختم ہو جائے گی ، بشمول لوگ ، عمارتیں اور یہاں تک کہ درخت ، مٹی اور پتھر بھی۔

اگر زمین کے اسپین روکنے کا عمل آہستہ آہستہ ہوتا تو کیا ہوتا؟

ناسا کے مطابق اس وقت ہماری زمین اپنے محور پر 1000 میل فی گھنٹہ کی رفتار سے گھوم رہی ہے اور جب کہ سورج کے گرد 67000 میل فی گھنٹہ کی اسپیڈ سےگھوم رہی ہے اور اربوں سالوں میں زمین کو اپنے اسپن روکنے کا زیادہ امکان ہے ، کیونکہ سورج اور چاند زمین کے اسپن پر کھینچ رہے ہیں۔ اس سے انسانوں ، جانوروں اور پودوں کو تبدیلی کی عادت ڈالنے کے لئے کافی وقت ملے گا۔

طبیعیات کے قوانین کے مطابق زمین اپنی اسپن کو سست ترین کرسکتا ۔ اس صورتحال کو “سورج کی ہم آہنگی” کہا جاتا ہے اور وہ ہمارے سیارے کے ایک رخ کو ہمیشہ سورج کا سامنا کرنے پر مجبور کرتا ہے اور دوسری طرف مستقل طور پر دور ہونے کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ زمین کا چاند پہلے ہی زمین کے ہم آہنگ گردش میں ہے جہاں چاند کا ایک رخ ہمیشہ ہمارا سامنا کرتا ہے اور دوسرا رخ ہمارے مخالف۔

اگر زمین نے مکمل طور پر گردش روک دی تو اس کے کچھ اور بھی عجیب و غریب اثرات مرتب ہوں گے ، ناسا نے کہا ہے  ایک تو میگنیٹک فیلڈ غالبا ختم ہوجائے گا کیونکہ ایسا لگتا ہے کہ یہ جزوی طور پر اسپن کے ذریعہ تیار ہوتا ہے۔ ہم اپنی رنگین اوراز کھو دیں گے ، اور زمین کے آس پاس موجود وان ایلن تابکاری بیلٹ بھی غائب ہوجائیں گے۔ تب زمین سورج کے خطرناک شعاعوں کے بیچ میں آجائے گی۔  اور سورج بہت ہی تابکاری چارجڈ پارٹیکلس زمین کی طرف بھیجے گا جو زمین پر ہرچیز کو ختم کردین گے۔ اور اس کے علاوہ یہاں پر رہنے والے تمام انسانوں اور جانوروں کو طرف نہیں معلوم ہوگا کہ کہاں جارہے ہیں۔

ایک نئے مطالعے کے مطابق زمین پر کم سے کم 1.75 بلین سالون تک زندگی موجود رہے گی جب تک نیوکلیئر ہولوکاسٹ یا ایسٹئارڈ یا اور کوئی تباھی مداخلت نہیں کرتی۔