کینسر کو جڑ سے اکھاڑنا ہو گیا آسان

Health
cancer killing virus

ایک صدی سے زیادہ عرصے سے ڈاکٹرس کینسر کے علاج کےلیے وائرس کو استعمال میں لانے کےلیے کوشش کررہے تھے جو اب جین ایڈیٹنگ کی بدولت تجربہ کامیاب ہوگیا ہے۔ دراصل اس وائرس کو ٹیومر کی تلاش کرنے اور ان کے ایجنٹوں کو ختم کرکے اور امیون سسٹم کو دوبارہ سے لڑنا سکھایا جاتا ہے۔ حالیہ برسوں میں مریضوں کی ایک چھوٹی سی لیکن بڑھتی ہوئی تعداد نے اس طریقیکار سے فائدہ اٹھانا شروع کردیا ہے۔

اس وائرس کو آنکولٹک (oncolytic viruses) کے نام سے جانا جاتا ہے اس کو باہر ماحول سے اور جینیٹک ایڈیٹنگ کے طریقے سے حاصل کیا جاتا ہے جو صحتمند خلیوں کو نقصان پہچائے بغیر کینسر کے خلیوں کو ختم کرنے میں مدد کرتا ہے۔
کچھ ماہ پہلے رینڈی رسل نامی ایک بندے کی جلد پہ ایک چھوٹے سے تل میں اسکن کینسر پایا گیا۔ اس کو ختم کرنے کےلیے بہت بار سرجریز کروانا پڑی اور اس طرح سے تقریبا 11 سرجریوں کے بعد بھی ٹیومر ختم نہیں ہو سکا لگاتار بڑہ رہا تھا اور اس ٹائیم تک رسل کے مطابق کینسر کا علاج کراتے کراتے سارا خاندان دیوالیہ ہو گیا تھا۔
آخرکار اسے بتایا گیا کہ اب آپ کی زندگی سات ماہ تک ہے گھر جاکے آرام کرو، اس کے بعد رسیل ہسپتال سے نکل کے اپنے گھر کی طرف جا رہا تھا تو اسی ہسپتال کے ہال سے ایک آواز آئی کہ آجاو شاید ھم آپ کی زندگی کو بچا پائیں۔
کچھ ہفتوں کے بعد رسل کو اسی ہسپتال (Vanderbilt University Medical Center) میں تجرباتی طور پر اس وائرس کو انجیکٹ کیا گیا جس کا کام ٹیومر کے خلیوں کو ختم کرنا تھا۔ اس سے پہلے جب بھی اپنے ٹیومر کی سرجری کرواکے واپس گھر جاتا تھا تو پھر بھی آدھی سائز کا ٹیومر رہ جاتا تھا لیکن اس بار یہ حیرت انگیز تھا کہ ٹیومر بلکل ہی ختم ہو گیا اور رسل کینسر کو ختم کرواکے سکون کی زندگی جی رہاہے۔

کینسر کے علاج کےلیے FDA سے منظور شدہ یہ پہلا وائرس ہے اور بھی بہت سارے وائرس کی اقسام کے اوپر تجربے کیے جارہے ہیں۔ میڈیکل سائنس کے میدان میں یہ انیٹی کینسر وائرس ٹیومر کو جڑسے ختم کرنے کے لیے ایک طاقتور نیا طریقا فراہم کرسکتے ہیں۔ نہ صرف اس وجہ سے کہ وہ ٹیومر کے خلیوں کو براہ راست نشانہ بناتے ہیں، بلکہ اس وجہ سے کہ وہ ھمارے مدافعتی نظام کو بھی ٹیومر سے لڑنے کی حوصلہ افضائی کرتے ہیں۔ اس وجہ سے کچھ محققین آنکولٹک وائرس کو امیونوتھراپی کی ایک شکل سمجھتے ہیں۔